ስብከቶች፤

مضمون 10: مُکاشفہ(مُکاشفہ کی کتاب پر تفسیر)

[باب3-6] <مُکاشفہ۳: ۱۴-۲۲> شاگردانہ زندگی کے لئے سچا ایمان

<مُکاشفہ۳: ۱۴-۲۲>

          

لَودیکیہ کی کلِیسیا کا ایمان وہ ایمان تھا جو خُداوندکےمنہ سےنکال پھینکنےکا مستحق تھا۔ لہذا خُداوند نے یہ صلاح دی کہ وہ اُس سے آگ میں تپایا ہوا سونا خریدلیں تاکہ وہ اپنے ایمان میں دولتمند ہوجائیں۔ یہ نیم گرم ایمان اِس زمانے کےراستباز لوگوں میں بھی اپنی ظاہری شکل بنا سکتا ہے۔ چونکہ اُنہیں مفت میں اُن کا ایمان ملاتھا ، لہذا اُنھیں یہ احساس نہیں تھاکہ اُن کا ایمان کتنا قیمتی تھا۔ خُدا نے اِس طرح اپنا ملامت اور تنبِیہ کرنےوالاکلام راستبازوں کوفرمایا ، تاکہ اُن کو وہ ایمان عطا کرے جو آگ میں تپائے ہوئے سونے کی مانند ہے۔ ہم اِس حوالے سے یہ بھی معلوم کرسکتے ہیں کہ خُداوند چاہتا تھا کہ آسیہ کی تمام سات کلیسیاؤں کا ایک ہی ایمان ہو۔ خُداوند اُن سب لوگوں کو حکم دیتاہےجوسُننے کےلئے کان رکھتے ہیں کہ رُوح القدس اپنی کلیسیاؤں سےکیا فرماتاہے۔

۳: ۱۷ سے ، ہم دیکھتے ہیں کہ لَودیکیہ کی کلِیسیااپنی خودفریبی میں گہرائی سےپھنس گئی تھی ، وہ یہ سوچتےتھے کہ اُن کی مادی افراط خُدا کی رُوحانی برکتوں کی طرح ہی ہیں اور یہ اُن کے ایمان کی وجہ سےتھا۔ اِس گمراہ جماعت کی، خُدا نے اِن کی رُوحانی غربت اور کمبختی کی سختی سے نشاندہی کی۔

لَودیکیہ کی کلیسیاایمان میں بظاہر دولت مند نظر آتی تھی، لیکن حقیقت میں یہ ایک بے وفا ، غریب کلیسیا تھی۔ اِس کا ایمان نیم گرم تھا ، یہ رُوحانی تکبر سے بھری ہوئی تھی، اور یہ یسوع سے زیادہ دُنیا سے محبت کرتی تھی۔

مُکاشفہ ۳: ۱۴-۲۲ایک شاگرد ی کی زندگی کی بات کرتاہے۔ یسوع کے حقیقی شاگرد وہ ہیں جو مسیح کے کلام کی فرمانبرداری اور پیروی کرتے ہیں۔ وہ تمام لوگ جو یسوع مسیح پرایمان رکھ کر نئے سرےسے پیدا ہوئے ہیں وہ اُس کے شاگرد بننے کے اہل ہیں۔ خُداوندچاہتاہے کہ ہم سب ایک شاگرد کی

 زندگی گزاریں۔ ہمیں یہ جاننا چاہئے کہ یہ شاگرد کی زندگی واقعتاًہمیں دی گئی ہے۔

حوالہ میں ، خُداوند نےفرمایا کہ وہ اُن مقدسین کواپنے منہ سے نکال پھینکےگا جو ایک شاگرد کی زندگی نہیں گزارتے ہیں۔ جیسا کہ آیات ۱۵-۱۶میں درج ہے ، " مَیں تیرے کاموں کو جانتا ہُوں کہ نہ تُو سرد ہے نہ گرم ۔ کاش کہ تُو سرد یا گرم ہوتا۔پس چُونکہ تُو نہ تو گرم ہے نہ سرد بلکہ نِیم گرم ہے اِس لِئے مَیں تُجھے اپنے مُنہ سے نِکال پَھینکنے کو ہُوں۔" اگرنجات یافتہ لوگ خُداوند کے سامنے نہ تو سرد اور نہ ہی گرم ہیں، تو یہ صرف اُن کی رُوحانی غربت کی نشاندہی کرسکتا ہے۔ نیز ، ایسے لوگ ابھی تک ایک شاگرد کی زندگی کے بارے میں نہیں جانتے ہیں۔ لیکن جو کوئی نئےسرےسےپیدا ہوئےہیں اُن سب کوایک شاگرد کی زندگی گزارنی چاہئے۔ہم پانی اور رُوح کی خوشخبری پر ایمان رکھ کر اپنے گناہوں سے نجات حاصل کرچکے ہیں۔ یہ ہماری نجات ہے۔

پھر ، ہمیں اپنی نجات کے بعد کیا دیا گیا تھا اور ہم نئےسرےسے پیدا ہوئے تھے؟ ہمیں ایک ایسی زندگی دی گئی تھی جو خُداوند کی طرح بننے کی کوشش کرتی ہے ، اُس کے احکامات کی پیروی اور فرمانبرداری کرتی ہے ، اور اُس کے کلام کومانگتی ہے۔ یہ ایک شاگرد کی زندگی ہے۔ اپنے مقدسین سے اِس شاگردی کا مطالبہ کرتے ہوئے ، خُدا نے یہ کہتے ہوئے لَودیکیہ کی کلیسیاکی سرزنش کی کہ یہ" نہ تو گرم تھی اور نہ ہی سرد۔"

وہ ایمان جو نہ گرم ہے اور نہ ہی سردایک نیم گرم ایمان ہے۔ تو پھر یہ نیم گرم ایمان کس قِسم کا ایمان ہے جو بنی نوع انسان کو نہ تو گرم اور نہ ہی سردہونےسے اتنا سکون فراہم کرتا ہے۔ یہ وہ ایمان ہے جو دونوں راستوں پرقائم رہنے کی کوشش کرتا ہے ، جوایک تیرسے دونشانےلگانے کی کوشش کرتا ہے۔ یہ وہ ایمان ہے جوایک شاگرد کی زندگی نہیں گزارتا ہے۔ وہ لوگ جن کا ایمان نیم گرم ہے وہ لوگ ہیں جو، اگرچہ وہ نجات پا چکے ہیں ، لیکن یسوع کی مرضی کی پیروی نہیں کرتے ہیں۔ وہ بظاہریسوع کی پیروی کرتے ہوئےدکھائی دے سکتے ہیں ، لیکن حقیقت میں وہ ایسا نہیں کرتے ہیں—اُن کا ایمان باڑے کے دونوں اطراف میں کاٹھی باندھنا، دوسرے لفظوں میں ، نیم گرم ایمان کہلاتا ہے۔

دُنیا ایسے ایمان کودانشمندی بیان کرتی ہے ۔ یہ ایمان دُنیاوی لحاظ سے دانشمندہوسکتا ہے ، لیکن یہ اِس قِسم کا ایمان ہے جوخُدا کےمنہ سے نکال پھینکےجانےکاسبب بنتا ہے۔کیانیم گرم ایمان ہےجوخُداوند کے منہ سے نکال پھینکا جاتا ہے۔ آپ کو اِسکے بارے میں کافی اچھا اندازہ ہونا چاہئے کہ وہ ایمان جو نہ توگرم ہے اور نہ ہی سردنظر آتا ہے۔ وہ لوگ جن کا ایمان نیم گرم ہے وہ نہ تو خُدا کی کلیسیاؤں کے کاموں سے متحدہوتے ہیں اور نہ ہی اُن سے جدا ہوتےہیں؛ وہ کرتے ہیں اور وہ سب ایک ہی وقت میں نہیں کرتے ہیں۔ اُن کی ایمان کی زندگیاں ایسی ہیں کہ اگراُنہیں ۶۰ نمبرکاٹنےکاکہاجائےتو ، پھر وہ اپنےآپکو ۶۰ پرہی ترتیب دیتےہیں ،نہ اِس سے زیادہ اورنہ ہی کم ۔

وہ جن کی ایمان کی زندگی اِس طرح کی ہے وہ رُوحانی طور پر غریب ہیں۔ جیسا کہ آیات ۱۷-۱۸ میں کہا گیا ہے ، "اور چُونکہ تُو کہتا ہے کہ مَیں دَولت مند ہُوں اور مالدار بن گیا ہُوں اور کِسی چِیز کا مُحتاج نہیں اور یہ نہیں جانتا کہ تُو کمبخت اور خوار اور غرِیب اور اندھا اور ننگا ہے۔ اِس لِئے مَیں تُجھے صلاح دیتا ہُوں کہ مُجھ سے آگ میں تپایا ہُؤا سونا خرِید لے تاکہ دَولت مند ہو جائے اور سفید پوشاک لے تاکہ تُو اُسے پہن کر ننگے پن کے ظاہِر ہونے کی شرمِندگی نہ اُٹھائے اور آنکھوں میں لگانے کے لِئے سُرمہ لے تاکہ تُو بِینا ہو جائے۔"

وہ لوگ جن کا ایمان نیم گرم ہے وہ اپنی دُنیاوی ترقی کو اپنی رُوحانی فراوانی سمجھتے ہیں۔ اگرچہ وہ محسوس کرتے ہیں کہ وہ دراصل کمبخت ، تھکے ہوئے اور غریب ہیں ، لیکن اُنہیں اِس کا پوری طرح احساس نہیں ہوتاہے۔ یہ وہ لوگ ہیں جو اپنے آپ کو نہیں جانتے ہیں۔ وہ خود سے سوچتے ہیں ، "میں ٹھیک ہوں۔ میں مخلص ، ہوشیار ، اور دوسروں کے ذریعہ منظور شدہ ہوں ، اور پس میرے لئے اِس طرح زندہ رہنا ٹھیک ہے ، اگرچہ میں بچایاجاچکاہوں ،"اور اپنی زندگیاں اپنے معیار کے مطابق گزارتےہیں۔ یہ لوگ دُنیا کے ساتھ وفادار ہیں ، لیکن وہ خُدا کی کلیسیا سےوفادار نہیں ہیں۔ اُن کا ایمان محض نیم گرم ہے۔ لہذا خُدا فرماتا ہے کہ وہ اُن کواپنےمنہ سےنکال پھینکےگا۔

وہ کلیسیا میں اپنی حاضری کی ناکامی سےبچنےکے بلند تر مقصد کے ساتھ آتے ہیں۔ وہ صرف کلیسیا کی عبادت میں بیٹھتے ہیں اور عبادت ختم ہوتے ہی وہاں سے چلے جاتے ہیں۔ وہ کبھی بھی رضاکارانہ طور پر کلیسیاکے کاموں میں حصہ نہیں لیتے ہیں ، اور اگر وہ یہ کرتے ہیں تو ، وہ اِس بات کو یقینی بناتے ہیں کہ یہ سب سے چھوٹی حصہ داری ہو۔ اُنکا کرنانہ کرنےجیساہوتا ہے،نہ کرنا کرنےجیساہوتا ہے۔یہ رُوحانی طور پر غریب لوگ ہیں۔

خُداوندایسے لوگوں کو درج ذیل صلاح دیتا ہے: " اِس لِئے مَیں تُجھے صلاح دیتا ہُوں کہ مُجھ سے آگ میں تپایا ہُؤا سونا خرِید لے تاکہ دَولت مند ہو جائے اور سفید پوشاک لے تاکہ تُو اُسے پہن کر ننگے پن کے ظاہِر ہونے کی شرمِندگی نہ اُٹھائے اور آنکھوں میں لگانے کے لِئے سُرمہ لے تاکہ تُو بِینا ہو جائے۔" اُس نے اُن سے کہا کہ وہ دولت مندہونے کے لئے آگ میں تپایاہوا سونا خریدلیں۔

اگر آپ واقعتا ًخُداوند کی پیروی کرنا چاہتے ہیں ، اور اگر آپ واقعتا ًچاہتے ہیں کہ وہ آپ کے ایمان کے لئےآپ کی تعریف کرے تو آپ کو اپنے ایمان کو سیکھنا چاہئے۔ پھر ، آپ ایمان کوکیسے سیکھ سکتے ہیں؟ آپ کو قربانی کی قیمت ادا کرکے اور کلام پر ایمان رکھتے ہوئے اِسے سیکھنا چاہئے۔ حوالہ ہمیں آگ میں تپائےہوئےسونے کو خریدنے کے لئے کہتا ہے۔ اِس کا مطلب یہ ہے کہ جب خُدا کے کلام کی پیروی کرنے کی بات آتی ہے تو ہمارے لئے بہت ساری آزمائشیں اور مصیبتیں موجودہیں۔ لیکن خُدا کے کلام پرایمان رکھنے اور اِس کی پیروی کرنے سے ایسی تمام آزمائشوں اور مصیبتوں پر غالب آیا جاسکتا ہے۔ ایسا کرنے سے ، ہمارے دل خالص بن جاتے ہیں، جس سے ہمیں یہ یقین ملتاہے کہ خُدا کے کلام کو سچائی کے طور پر پہچاننا اور اِس پر پورے دل سے ایمان رکھنا ہے۔ یہ وہ ایمان ہے جو خالص سونے کی مانند ہے۔

سچا ایمان حاصل کرنے کے لئے، ہمیں قربانی کی قیمت ادا کرنا ہوگی ، کیونکہ قربانی کی قیمت ادا کیے بغیر ، ہم ایمان نہیں سیکھ سکتے ہیں۔ دوسرے لفظوں میں ، ہم کبھی بھی مشکلات سے دوچار ہوئےبغیر ایمان کو نہیں سیکھ سکتے ہیں۔ اگر ہم واقعتا ًایمان کے لوگ بننا چاہتے ہیں تو، خُداوندکے شاگرد کی زندگی گزاریں ، اور اپنے ایمان کے لئےمبارک بنیں، تب ہمیں قربانی کی قیمت ادا کرنا ہوگی۔ قربانی کے بغیر ، اِس کو کبھی حاصل نہیں کِیا جاسکتاہے۔

شروع ہی سے کون مضبوط ایمان رکھتاہے؟کوئی نہیں۔ یہ اِس لئے ہےکہ لوگ ایمان سے ناواقف ہیں جوکلیسیا اُنہیں کلام کے بارے میں سکھاتی ہے اور اِس کےساتھ اُن کی رہنمائی کرتی ہے۔ ہمیں اُس کی تعمیل کرنی چاہئے جو کلیسیا ہماری رہنمائی کرتی ہے اور ایمان کے ساتھ اِس کی پیروی کرنی چاہئے۔ لیکن ایسا کرنے میں مشکل ضروری ہے؛کبھی کبھار صبر کی ضرورت پڑتی ہے۔ یہ ہےکیوں کلام ، رفاقت ، اور تعلیم کی رہنمائی حاصل کرکے ایمان کےلوگ بننا قربانی کے ساتھ ہے۔ لیکن چونکہ لوگ قربانی نہیں دینا چاہتے ہیں ، حالانکہ وہ ایمان سیکھنا چاہتے ہیں ، لہذا اُن میں تطہیر کا حقیقی ایمان نہیں ہوسکتا ہے۔ یہ ہے کیوں خُداوند ہمیں اُس سے آگ میں تپایاہواسونا خریدنے کے لئے کہتا ہے تاکہ ہم ایمان میں دولت مندہوجائیں۔

 آپ سمجھ سکتے ہیں کہ اِس کلام کا کیا مطلب ہےصرف، جب آپ سابقہ مقدسین کے ایمان سے سیکھتے اور اُن کی زندگیوں کی پیروی کرتے ہیں۔ اگر آپ صرف نظریہ کی بنیاد پرکلام سُنتے ہیں اور درحقیقت اِس کی پیروی نہیں کرتےکہ یہ آپ کو کیاحکم دیتا ہے ، اور اگر آپ گواہیاں دینے، دُعائیں کرنے یا اجتماعات میں حصہ لیتے ہیں لیکن حقیقت میں ان کو عملی جامہ نہیں پہناتے ہیں تو ، آپ ایمان نہیں سیکھ سکتےہیں۔ چونکہ آپ تھوڑا سا ایمان رکھتےہیں ، آپ اپنے ایمان کی پیمائش کرتے ہیں کہ آپ اپنے معیار کے مطابق دُنیا کے معیار پر بُرا نہیں بنیں گے۔ آپ خود سے سوچتےہیں ، "میں نجات پاچکا ہوں ، میرے پاس پیسہ ہے ، اور میں دُنیاوی اصطلاحات میں ٹھیک کر رہا ہوں ، اور اِس لئے مجھے دوسروں سے بہتر ہونا چاہئے۔ ہاں ، مجھے یقین ہے کہ میں اُن لوگوں سے بہتر ہوں۔"

اگر آپ واقعی سچے ایمان کو سیکھنا چاہتے ہیں جو سونے کی طرح ہے تو ، آپ کو قربانی کی قیمت ادا کرنا ہوگی۔ کیافرمانبرداری اور پیروی کرنا آسان ہے؟ فرمانبرداری کے لئے قربانی دینی پڑتی ہے۔ کیا قربانی دینا آسان ہے؟ یقیناً نہیں۔ لیکن اگر آپ خُداکےمنہ سے نکال پھینکےجانےسےبچنا چاہتے ہیں تو ، آپ کو قربانی دے کر فرمانبرداری کرنی ہوگی۔

لیکن وہ لوگ ، جنھوں نے حقیقی ایمان کو نہیں سیکھا ، رُوحانی طور پر غریب ہیں وہ کبھی بھی قربانی دینا نہیں چاہتے ہیں۔فرمانبرداری کرنے کے لئے، کسی کو پہلے اپنےخیالوں کوختم کرنا چاہئے۔ ایسا کرنے کے قابل نہ ہونے کے سبب ، وقت گزرنے کے ساتھ ، اُن کے دل اُن کی رُوحانی کمبختی میں مبتلا رہتے ہیں۔ اپنے ایمان کی کمی کا احساس نہ کرتےہوئے ، وہ صرف اُن مقدسین پر الزام لگاتے ہیں جو اُن کی پُشت سے اُن کے سامنے ایمان کے ساتھ چلتےہیں۔ آپ کو سچے ایمان کو سیکھنا چاہئے۔ جب آپ رُوحانی لڑائی میں اُتریں گے اور خُدا کی طرف سے لڑیں گے تو ، آپ کاایمان خالص ہوجائے گا جیسے ہی آپ رُوحانی خرابیاں حاصل کریں گے اوراحساس کریں گے کہ رُوحانی فتح کی زندگی گزارنے کے لئے یہ کیا لیتاہے۔ آپ اِس ایمان کو تب ہی جان سکتے ہیں جب آپ واقعتا ًاِس کا تجربہ کریں گے۔

خُدا نے لَودیکیہ کی کلیسیاکے خادم کو یہ لکھتےہوئےڈانٹا ، "تُم نہ تو اپنےننگےپن اور نہ ہی اپنی غربت کوجانتا ہو۔ تم بچائےجاچکےہو ، لیکن تمہاراایمان نیم گرم ہے— نہ ہی یہ اور نہ ہی وہ۔ صرف ایک چیز جو تمہارے پاس ہے وہ تمہاری نجات ہے ، جسے تم نے دورچھپارکھاہے۔ اِس کے علاوہ تمہارے پاس اور کچھ نہیں ہے۔"

کیا خُدا کے خادمین یا ہمارے رُوحانی پیشوا شاگردی کی زندگی بسر کیے بغیرہی، صرف وقت گزرنے کے

ساتھ ہمارےایمان کے پیش رو بن گئے ؟ یقیناً نہیں! وہ خوشی اور غم میں خُداوند کے لئے ہر طرح کی مشکل میں سے گزرے۔ خُدا آپ سے پہلے لوگوں پراُن چیزوں کےگزرنےکےوسیلےآپ کی اُن تمام چیزوں کےلئے رہنمائی کرتا ہے جن سے آپ بھی بالآخر گزریں گے۔ لہذا آپ کو اِس حقیقت پر ایمان رکھنا چاہئے کہ خُدا آپ کو اُن لوگوں کے ذریعہ تعلیم دیتا ہےاور رہنمائی کرتا ہے جو آپ سے پہلے ایمان کی راہ کی پیروی کرتے تھے۔